سراج منیر صاحب کی ایک غزل

یہ رونقِ اسباب جہاں کچھ بھی نہیں ہے
بس ایک وہی ذات ہے یاں کچھ بھی نہیں ہے

حیرانئ صد عمر کا حاصل نہیں کوئی
اے چشمِ حقیقت نگراں کچھ بھی نہیں ہے

کچھ عکس جھلکتے ہیں یہاں رنگِ شفق میں
سچ کہیے تو جز آب رواں کچھ بھی نہیں ہے

ایک دیدۂ حیران ہے اک صورتِ صد جہت
ورنہ تو یہاں دیدہ وراں کچھ بھی نہیں ہے

کچھ اجڑے مکاں دیر سے خاموش کھڑے ہیں
اس گاوں میں جز صوتِ سگاں کچھ بھی نہیں ہے

اک دائرۂ عمر ہے، منزل ہے نہ رستہ
جاتے ہو کہاں راہ رواں کچھ بھی نہیں ہے

اُس عالم لاہوت میں ہر شرط ہے ساقط
زنجیرِ زماں، طاقِ مکاں کچھ بھی نہیں ہے

یہ کیسی عبادت ہے خداوندِ دو عالم
بانگِ جرس و صوتِ اذاں کچھ بھی نہیں ہے

بس نورِ نگہ ہے متفاوت کہ جہاں میں
ہر شے ہے عیاں، سرِّ نہاں کچھ بھی نہیں ہے

بشکریہ جناب محمد خورشید عبداللہ صاحب

کیٹاگری میں : غزل

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں